صحیح بخاریکتاب بدء الوحی

صحیح بخاری جلد اول : کتاب بدء الوحی (وحی کا بیان): حدیث 3

كتاب بدء الوحى
کتاب: وحی کے بیان میں
THE BOOK OF REVELATION.
( بَابٌ: )
باب: (کیفیت وحی)۔
( CHAPTER. )
حَدَّثَنَا  يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، عَنْ عُقَيْلٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، عَنْ عُرْوَةَ بْنِ الزُّبَيْرِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، عَنْ عَائِشَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏أُمِّ الْمُؤْمِنِينَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ "أَوَّلُ مَا بُدِئَ بِهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الْوَحْيِ الرُّؤْيَا الصَّالِحَةُ فِي النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏فَكَانَ لَا يَرَى رُؤْيَا إِلَّا جَاءَتْ مِثْلَ فَلَقِ الصُّبْحِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ حُبِّبَ إِلَيْهِ الْخَلَاءُ وَكَانَ يَخْلُو بِغَارِ حِرَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏فَيَتَحَنَّثُ فِيهِ وَهُوَ التَّعَبُّدُ اللَّيَالِيَ ذَوَاتِ الْعَدَدِ قَبْلَ أَنْ يَنْزِعَ إِلَى أَهْلِهِ وَيَتَزَوَّدُ لِذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَرْجِعُ إِلَى خَدِيجَةَ فَيَتَزَوَّدُ لِمِثْلِهَا حَتَّى جَاءَهُ الْحَقُّ وَهُوَ فِي غَارِ حِرَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏فَجَاءَهُ الْمَلَكُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اقْرَأْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَا أَنَا بِقَارِئٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي حَتَّى بَلَغَ مِنِّي الْجَهْدَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَرْسَلَنِي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اقْرَأْ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ مَا أَنَا بِقَارِئٍ، ‏‏‏‏‏‏فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي الثَّانِيَةَ حَتَّى بَلَغَ مِنِّي الْجَهْدَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَرْسَلَنِي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اقْرَأْ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ مَا أَنَا بِقَارِئٍ، ‏‏‏‏‏‏فَأَخَذَنِي فَغَطَّنِي الثَّالِثَةَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَرْسَلَنِي فَقَالَ:‏‏‏‏ "اقْرَأْ بِاسْمِ رَبِّكَ الَّذِي خَلَقَ ‏‏‏‏ 1 ‏‏‏‏ خَلَقَ الإِنْسَانَ مِنْ عَلَقٍ ‏‏‏‏ 2 ‏‏‏‏ اقْرَأْ وَرَبُّكَ الأَكْرَمُ ‏‏‏‏ 3 ‏‏‏‏”سورة العلق آية 1-3، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعَ بِهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَرْجُفُ فُؤَادُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَدَخَلَ عَلَى خَدِيجَةَ بِنْتِ خُوَيْلِدٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ زَمِّلُونِي زَمِّلُونِي، ‏‏‏‏‏‏فَزَمَّلُوهُ حَتَّى ذَهَبَ عَنْهُ الرَّوْعُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لِخَدِيجَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَأَخْبَرَهَا الْخَبَرَ:‏‏‏‏ لَقَدْ خَشِيتُ عَلَى نَفْسِي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ خَدِيجَةُ:‏‏‏‏ كَلَّا وَاللَّهِ مَا يُخْزِيكَ اللَّهُ أَبَدًا، ‏‏‏‏‏‏إِنَّكَ لَتَصِلُ الرَّحِمَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَحْمِلُ الْكَلَّ، ‏‏‏‏‏‏وَتَكْسِبُ الْمَعْدُومَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَقْرِي الضَّيْفَ، ‏‏‏‏‏‏وَتُعِينُ عَلَى نَوَائِبِ الْحَقِّ، ‏‏‏‏‏‏فَانْطَلَقَتْ بِهِ خَدِيجَةُ حَتَّى أَتَتْ بِهِ وَرَقَةَ بْنَ نَوْفَلِ بْنِ أَسَدِ بْنِ عَبْدِ الْعُزَّى ابْنَ عَمِّ خَدِيجَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ امْرَأً تَنَصَّرَ فِي الْجَاهِلِيَّةِ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ يَكْتُبُ الْكِتَابَ الْعِبْرَانِيَّ، ‏‏‏‏‏‏فَيَكْتُبُ مِنَ الْإِنْجِيلِ بِالْعِبْرَانِيَّةِ مَا شَاءَ اللَّهُ أَنْ يَكْتُبَ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ شَيْخًا كَبِيرًا قَدْ عَمِيَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ لَهُ خَدِيجَةُ:‏‏‏‏ يَا ابْنَ عَمِّ، ‏‏‏‏‏‏اسْمَعْ مِنَ ابْنِ أَخِيكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُ وَرَقَةُ:‏‏‏‏ يَا ابْنَ أَخِي، ‏‏‏‏‏‏مَاذَا تَرَى، ‏‏‏‏‏‏فَأَخْبَرَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ خَبَرَ مَا رَأَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُ وَرَقَةُ:‏‏‏‏ هَذَا النَّامُوسُ الَّذِي نَزَّلَ اللَّهُ عَلَى مُوسَى صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَا لَيْتَنِي فِيهَا جَذَعًا، ‏‏‏‏‏‏لَيْتَنِي أَكُونُ حَيًّا إِذْ يُخْرِجُكَ قَوْمُكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَوَمُخْرِجِيَّ هُمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏لَمْ يَأْتِ رَجُلٌ قَطُّ بِمِثْلِ مَا جِئْتَ بِهِ إِلَّا عُودِيَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ يُدْرِكْنِي يَوْمُكَ أَنْصُرْكَ نَصْرًا مُؤَزَّرًا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ لَمْ يَنْشَبْ وَرَقَةُ أَنْ تُوُفِّيَ وَفَتَرَ الْوَحْيُ”.
 

حدیث عربی رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:         

3 ـ حدثنا يحيى بن بكير، قال حدثنا الليث، عن عقيل، عن ابن شهاب، عن عروة بن الزبير، عن عائشة أم المؤمنين، أنها قالت أول ما بدئ به رسول الله صلى الله عليه وسلم من الوحى الرؤيا الصالحة في النوم، فكان لا يرى رؤيا إلا جاءت مثل فلق الصبح، ثم حبب إليه الخلاء، وكان يخلو بغار حراء فيتحنث فيه ـ وهو التعبد ـ الليالي ذوات العدد قبل أن ينزع إلى أهله، ويتزود لذلك، ثم يرجع إلى خديجة، فيتزود لمثلها، حتى جاءه الحق وهو في غار حراء، فجاءه الملك فقال اقرأ‏.‏ قال ‏”‏ ما أنا بقارئ ‏”‏‏.‏ قال ‏”‏ فأخذني فغطني حتى بلغ مني الجهد، ثم أرسلني فقال اقرأ‏.‏ قلت ما أنا بقارئ‏.‏ فأخذني فغطني الثانية حتى بلغ مني الجهد، ثم أرسلني فقال اقرأ‏.‏ فقلت ما أنا بقارئ‏.‏ فأخذني فغطني الثالثة، ثم أرسلني فقال ‏{‏اقرأ باسم ربك الذي خلق * خلق الإنسان من علق * اقرأ وربك الأكرم‏}‏ ‏”‏‏.‏ فرجع بها رسول الله صلى الله عليه وسلم يرجف فؤاده، فدخل على خديجة بنت خويلد رضى الله عنها فقال ‏”‏ زملوني زملوني ‏”‏‏.‏ فزملوه حتى ذهب عنه الروع، فقال لخديجة وأخبرها الخبر ‏”‏ لقد خشيت على نفسي ‏”‏‏.‏ فقالت خديجة كلا والله ما يخزيك الله أبدا، إنك لتصل الرحم، وتحمل الكل، وتكسب المعدوم، وتقري الضيف، وتعين على نوائب الحق‏.‏ فانطلقت به خديجة حتى أتت به ورقة بن نوفل بن أسد بن عبد العزى ابن عم خديجة ـ وكان امرأ تنصر في الجاهلية، وكان يكتب الكتاب العبراني، فيكتب من الإنجيل بالعبرانية ما شاء الله أن يكتب، وكان شيخا كبيرا قد عمي ـ فقالت له خديجة يا ابن عم اسمع من ابن أخيك‏.‏ فقال له ورقة يا ابن أخي ماذا ترى فأخبره رسول الله صلى الله عليه وسلم خبر ما رأى‏.‏ فقال له ورقة هذا الناموس الذي نزل الله على موسى صلى الله عليه وسلم يا ليتني فيها جذعا، ليتني أكون حيا إذ يخرجك قومك‏.‏ فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم ‏”‏ أومخرجي هم ‏”‏‏.‏ قال نعم، لم يأت رجل قط بمثل ما جئت به إلا عودي، وإن يدركني يومك أنصرك نصرا مؤزرا‏.‏ ثم لم ينشب ورقة أن توفي وفتر الوحى‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

3 ـ حدثنا یحیى بن بکیر، قال حدثنا اللیث، عن عقیل، عن ابن شہاب، عن عروۃ بن الزبیر، عن عایشۃ ام المومنین، انہا قالت اول ما بدی بہ رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم من الوحى الرویا الصالحۃ فی النوم، فکان لا یرى رویا الا جاءت مثل فلق الصبح، ثم حبب الیہ الخلاء، وکان یخلو بغار حراء فیتحنث فیہ ـ وہو التعبد ـ اللیالی ذوات العدد قبل ان ینزع الى اہلہ، ویتزود لذلک، ثم یرجع الى خدیجۃ، فیتزود لمثلہا، حتى جاءہ الحق وہو فی غار حراء، فجاءہ الملک فقال اقرا‏.‏ قال ‏”‏ ما انا بقاری ‏”‏‏.‏ قال ‏”‏ فاخذنی فغطنی حتى بلغ منی الجہد، ثم ارسلنی فقال اقرا‏.‏ قلت ما انا بقاری‏.‏ فاخذنی فغطنی الثانیۃ حتى بلغ منی الجہد، ثم ارسلنی فقال اقرا‏.‏ فقلت ما انا بقاری‏.‏ فاخذنی فغطنی الثالثۃ، ثم ارسلنی فقال ‏{‏اقرا باسم ربک الذی خلق * خلق الانسان من علق * اقرا وربک الاکرم‏}‏ ‏”‏‏.‏ فرجع بہا رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم یرجف فوادہ، فدخل على خدیجۃ بنت خویلد رضى اللہ عنہا فقال ‏”‏ زملونی زملونی ‏”‏‏.‏ فزملوہ حتى ذہب عنہ الروع، فقال لخدیجۃ واخبرہا الخبر ‏”‏ لقد خشیت على نفسی ‏”‏‏.‏ فقالت خدیجۃ کلا واللہ ما یخزیک اللہ ابدا، انک لتصل الرحم، وتحمل الکل، وتکسب المعدوم، وتقری الضیف، وتعین على نوایب الحق‏.‏ فانطلقت بہ خدیجۃ حتى اتت بہ ورقۃ بن نوفل بن اسد بن عبد العزى ابن عم خدیجۃ ـ وکان امرا تنصر فی الجاہلیۃ، وکان یکتب الکتاب العبرانی، فیکتب من الانجیل بالعبرانیۃ ما شاء اللہ ان یکتب، وکان شیخا کبیرا قد عمی ـ فقالت لہ خدیجۃ یا ابن عم اسمع من ابن اخیک‏.‏ فقال لہ ورقۃ یا ابن اخی ماذا ترى فاخبرہ رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم خبر ما راى‏.‏ فقال لہ ورقۃ ہذا الناموس الذی نزل اللہ على موسى صلى اللہ علیہ وسلم یا لیتنی فیہا جذعا، لیتنی اکون حیا اذ یخرجک قومک‏.‏ فقال رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم ‏”‏ اومخرجی ہم ‏”‏‏.‏ قال نعم، لم یات رجل قط بمثل ما جیت بہ الا عودی، وان یدرکنی یومک انصرک نصرا موزرا‏.‏ ثم لم ینشب ورقۃ ان توفی وفتر الوحى‏.‏

حدیث کا اردو ترجمہ:  

ہم کو یحییٰ بن بکیر نے یہ حدیث بیان کی، وہ کہتے ہیں کہ اس حدیث کی ہم کو لیث نے خبر دی، لیث عقیل سے روایت کرتے ہیں۔ عقیل ابن شہاب سے، وہ عروہ بن زبیر سے، وہ ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا سے نقل کرتے ہیں کہ انہوں نے بتلایا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر وحی کا ابتدائی دور اچھے سچے پاکیزہ خوابوں سے شروع ہوا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم خواب میں جو کچھ دیکھتے وہ صبح کی روشنی کی طرح صحیح اور سچا ثابت ہوتا۔ پھر من جانب قدرت آپ صلی اللہ علیہ وسلم تنہائی پسند ہو گئے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے غار حرا میں خلوت نشینی اختیار فرمائی اور کئی کئی دن اور رات وہاں مسلسل عبادت اور یاد الٰہی و ذکر و فکر میں مشغول رہتے۔ جب تک گھر آنے کو دل نہ چاہتا توشہ ہمراہ لیے ہوئے وہاں رہتے۔ توشہ ختم ہونے پر ہی اہلیہ محترمہ خدیجہ رضی اللہ عنہا کے پاس تشریف لاتے اور کچھ توشہ ہمراہ لے کر پھر وہاں جا کر خلوت گزیں ہو جاتے، یہی طریقہ جاری رہا یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر حق منکشف ہو گیا اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم غار حرا ہی میں قیام پذیر تھے کہ اچانک جبرائیل علیہ السلام آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس حاضر ہوئے اور کہنے لگے کہ اے محمد! پڑھو آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ میں نے کہا کہ میں پڑھنا نہیں جانتا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ فرشتے نے مجھے پکڑ کر اتنے زور سے بھینچا کہ میری طاقت جواب دے گئی، پھر مجھے چھوڑ کر کہا کہ پڑھو، میں نے پھر وہی جواب دیا کہ میں پڑھا ہوا نہیں ہوں۔ اس فرشتے نے مجھ کو نہایت ہی زور سے بھینچا کہ مجھ کو سخت تکلیف محسوس ہوئی، پھر اس نے کہا کہ پڑھ! میں نے کہا کہ میں پڑھا ہوا نہیں ہوں۔ فرشتے نے تیسری بار مجھ کو پکڑا اور تیسری مرتبہ پھر مجھ کو بھینچا پھر مجھے چھوڑ دیا اور کہنے لگا کہ پڑھو اپنے رب کے نام کی مدد سے جس نے پیدا کیا اور انسان کو خون کی پھٹکی سے بنایا، پڑھو اور آپ کا رب بہت ہی مہربانیاں کرنے والا ہے۔ پس یہی آیتیں آپصلی اللہ علیہ وسلم جبرائیل علیہ السلام سے سن کر اس حال میں غار حرا سے واپس ہوئے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا دل اس انوکھے واقعہ سے کانپ رہا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم خدیجہ کے ہاں تشریف لائے اور فرمایا کہ مجھے کمبل اڑھا دو، مجھے کمبل اڑھا دو۔ لوگوں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو کمبل اڑھا دیا۔ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ڈر جاتا رہا۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی زوجہ محترمہ خدیجہ رضی اللہ عنہا کو تفصیل کے ساتھ یہ واقعہ سنایا اور فرمانے لگے کہ مجھ کو اب اپنی جان کا خوف ہو گیا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی اہلیہ محترمہ خدیجہ رضی اللہ عنہا نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی ڈھارس بندھائی اور کہا کہ آپ کا خیال صحیح نہیں ہے۔ اللہ کی قسم! آپ کو اللہ کبھی رسوا نہیں کرے گا، آپ تو اخلاق فاضلہ کے مالک ہیں، آپ تو کنبہ پرور ہیں، بے کسوں کا بوجھ اپنے سر پر رکھ لیتے ہیں، مفلسوں کے لیے آپ کماتے ہیں، مہمان نوازی میں آپ بےمثال ہیں اور مشکل وقت میں آپ امر حق کا ساتھ دیتے ہیں۔ ایسے اوصاف حسنہ والا انسان یوں بے وقت ذلت و خواری کی موت نہیں پا سکتا۔ پھر مزید تسلی کے لیے خدیجہ رضی اللہ عنہا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو ورقہ بن نوفل کے پاس لے گئیں، جو ان کے چچا زاد بھائی تھے اور زمانہ جاہلیت میں نصرانی مذہب اختیار کر چکے تھے اور عبرانی زبان کے کاتب تھے، چنانچہ انجیل کو بھی حسب منشائے خداوندی عبرانی زبان میں لکھا کرتے تھے۔ (انجیل سریانی زبان میں نازل ہوئی تھی پھر اس کا ترجمہ عبرانی زبان میں ہوا۔ ورقہ اسی کو لکھتے تھے) وہ بہت بوڑھے ہو گئے تھے یہاں تک کہ ان کی بینائی بھی رخصت ہو چکی تھی۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا نے ان کے سامنے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے حالات بیان کیے اور کہا کہ اے چچا زاد بھائی! اپنے بھتیجے (محمد صلی اللہ علیہ وسلم ) کی زبانی ذرا ان کی کیفیت سن لیجیئے وہ بولے کہ بھتیجے آپ نے جو کچھ دیکھا ہے، اس کی تفصیل سناؤ۔ چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے از اول تا آخر پورا واقعہ سنایا، جسے سن کر ورقہ بے اختیار ہو کر بول اٹھے کہ یہ تو وہی ناموس (معزز راز دان فرشتہ) ہے جسے اللہ نے موسیٰ علیہ السلام پر وحی دے کر بھیجا تھا۔ کاش، میں آپ کے اس عہد نبوت کے شروع ہونے پر جوان عمر ہوتا۔ کاش میں اس وقت تک زندہ رہتا جب کہ آپ کی قوم آپ کو اس شہر سے نکال دے گی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ سن کر تعجب سے پوچھا کہ کیا وہ لوگ مجھ کو نکال دیں گے؟ (حالانکہ میں تو ان میں صادق و امین و مقبول ہوں) ورقہ بولا ہاں یہ سب کچھ سچ ہے۔ مگر جو شخص بھی آپ کی طرح امر حق لے کر آیا لوگ اس کے دشمن ہی ہو گئے ہیں۔ اگر مجھے آپ کی نبوت کا وہ زمانہ مل جائے تو میں آپ کی پوری پوری مدد کروں گا۔ مگر ورقہ کچھ دنوں کے بعد انتقال کر گئے۔ پھر کچھ عرصہ تک وحی کی آمد موقوف رہی۔

English Translation: 

Narrated ‘Aisha: (the mother of the faithful believers) The commencement of the Divine Inspiration to Allah’s Apostle was in the form of good dreams which came true like bright daylight, and then the love of seclusion was bestowed upon him. He used to go in seclusion in the cave of Hira where he used to worship (Allah alone) continuously for many days before his desire to see his family. He used to take with him the journey food for the stay and then come back to (his wife) Khadija to take his food likewise again till suddenly the Truth descended upon him while he was in the cave of Hira. The angel came to him and asked him to read. The Prophet replied, "I do not know how to read.” The Prophet added, "The angel caught me (forcefully) and pressed me so hard that I could not bear it any more. He then released me and again asked me to read and I replied, ‘I do not know how to read.’ Thereupon he caught me again and pressed me a second time till I could not bear it any more. He then released me and again asked me to read but again I replied, ‘I do not know how to read (or what shall I read)?’ Thereupon he caught me for the third time and pressed me, and then released me and said, ‘Read in the name of your Lord, who has created (all that exists), created man from a clot. Read! And your Lord is the Most Generous.” (96.1, 96.2, 96.3) Then Allah’s Apostle returned with the Inspiration and with his heart beating severely. Then he went to Khadija bint Khuwailid and said, "Cover me! Cover me!” They covered him till his fear was over and after that he told her everything that had happened and said, "I fear that something may happen to me.” Khadija replied, "Never! By Allah, Allah will never disgrace you. You keep good relations with your kith and kin, help the poor and the destitute, serve your guests generously and assist the deserving calamity-afflicted ones.” Khadija then accompanied him to her cousin Waraqa bin Naufal bin Asad bin ‘Abdul ‘Uzza, who, during the pre-Islamic Period became a Christian and used to write the writing with Hebrew letters. He would write from the Gospel in Hebrew as much as Allah wished him to write. He was an old man and had lost his eyesight. Khadija said to Waraqa, "Listen to the story of your nephew, O my cousin!” Waraqa asked, "O my nephew! What have you seen?” Allah’s Apostle described whatever he had seen. Waraqa said, "This is the same one who keeps the secrets (angel Gabriel) whom Allah had sent to Moses. I wish I were young and could live up to the time when your people would turn you out.” Allah’s Apostle asked, "Will they drive me out?” Waraqa replied in the affirmative and said, "Anyone (man) who came with something similar to what you have brought was treated with hostility; and if I should remain alive till the day when you will be turned out then I would support you strongly.” But after a few days Waraqa died and the Divine Inspiration was also paused for a while.
USC-MSA web (English) Reference: Book 1 , Number 3

شیر سلفی

شیر سلفی ایک بلاگر اور ویب ڈیزائنر ہیں۔ احیاء السنۃ ویب سائٹس کے تکنیکی معاون ہیں۔ جو کہ اردو ، پشتو، انگریزی میں قرآن و سنت کی دعوت پر مبنی ہیں۔ اس ویب سائٹ (دفاع حدیث) کے منتظم ہیں۔ جو کہ احیاء السنۃ کا ہی ایک پروجیکٹ ہے۔ اپنی ایک کمپیوٹر تعلیمی ویب سائٹ بھی www.sahlatech.com کے نام سے چلا رہے ہیں۔ آپ ان سے sher.salafe@gmail.com پر رابطہ کر سکتے ہیں۔

Related Articles

Back to top button
Close