صحیح بخاریکتاب العمل فی الصلاۃ

صحیح بخاری جلد دؤم : كتاب العمل في الصلاة ( نماز کے کام کے بارے میں) : حدیث:-1218

كتاب العمل في الصلاة
کتاب: نماز کے کام کے بارے میں

Chapter No: 16

باب رَفْعِ الأَيْدِي فِي الصَّلاَةِ لأَمْرٍ يَنْزِلُ بِهِ

To raise the hands in Salat because of some necessity which one encounters during the Salat

باب : نماز میں کوئی حادثہ پیش آئے تو ہاتھ اٹھا کر دعا کرنا.


[quote arrow=”yes” "]

1: حدیث اعراب کے ساتھ:

2: حدیث عربی رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

3: حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

4: حدیث کا اردو ترجمہ:

5: حدیث کی اردو تشریح:

English Translation :6 

[/quote]

حدیث اعراب کے ساتھ:  

حدیث نمبر:1218         

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ ـ رضى الله عنه ـ قَالَ بَلَغَ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم أَنَّ بَنِي عَمْرِو بْنِ عَوْفٍ بِقُبَاءٍ كَانَ بَيْنَهُمْ شَىْءٌ، فَخَرَجَ يُصْلِحُ بَيْنَهُمْ فِي أُنَاسٍ مِنْ أَصْحَابِهِ، فَحُبِسَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم وَحَانَتِ الصَّلاَةُ، فَجَاءَ بِلاَلٌ إِلَى أَبِي بَكْرٍ ـ رضى الله عنهما ـ فَقَالَ يَا أَبَا بَكْرٍ، إِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم قَدْ حُبِسَ وَقَدْ حَانَتِ الصَّلاَةُ، فَهَلْ لَكَ أَنْ تَؤُمَّ النَّاسَ قَالَ نَعَمْ إِنْ شِئْتَ‏.‏ فَأَقَامَ بِلاَلٌ الصَّلاَةَ، وَتَقَدَّمَ أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ فَكَبَّرَ لِلنَّاسِ، وَجَاءَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم يَمْشِي فِي الصُّفُوفِ يَشُقُّهَا شَقًّا، حَتَّى قَامَ فِي الصَّفِّ، فَأَخَذَ النَّاسُ فِي التَّصْفِيحِ‏.‏ قَالَ سَهْلٌ التَّصْفِيحُ هُوَ التَّصْفِيقُ‏.‏ قَالَ وَكَانَ أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ لاَ يَلْتَفِتُ فِي صَلاَتِهِ، فَلَمَّا أَكْثَرَ النَّاسُ الْتَفَتَ فَإِذَا رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَأَشَارَ إِلَيْهِ، يَأْمُرُهُ أَنْ يُصَلِّيَ، فَرَفَعَ أَبُو بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ يَدَهُ، فَحَمِدَ اللَّهَ، ثُمَّ رَجَعَ الْقَهْقَرَى وَرَاءَهُ حَتَّى قَامَ فِي الصَّفِّ، وَتَقَدَّمَ رَسُولُ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَصَلَّى لِلنَّاسِ، فَلَمَّا فَرَغَ أَقْبَلَ عَلَى النَّاسِ فَقَالَ ‏”‏ يَا أَيُّهَا النَّاسُ مَا لَكُمْ حِينَ نَابَكُمْ شَىْءٌ فِي الصَّلاَةِ أَخَذْتُمْ بِالتَّصْفِيحِ إِنَّمَا التَّصْفِيحُ لِلنِّسَاءِ، مَنْ نَابَهُ شَىْءٌ فِي صَلاَتِهِ فَلْيَقُلْ سُبْحَانَ اللَّهِ ‏”‏‏.‏ ثُمَّ الْتَفَتَ إِلَى أَبِي بَكْرٍ ـ رضى الله عنه ـ فَقَالَ ‏”‏ يَا أَبَا بَكْرٍ، مَا مَنَعَكَ أَنْ تُصَلِّيَ لِلنَّاسِ حِينَ أَشَرْتُ إِلَيْكَ ‏”‏‏.‏ قَالَ أَبُو بَكْرٍ مَا كَانَ يَنْبَغِي لاِبْنِ أَبِي قُحَافَةَ أَنْ يُصَلِّيَ بَيْنَ يَدَىْ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم‏‏‏‏‏‏‏‏.

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:    

1218 ـ حدثنا قتيبة، حدثنا عبد العزيز، عن أبي حازم، عن سهل بن سعد ـ رضى الله عنه ـ قال بلغ رسول الله صلى الله عليه وسلم أن بني عمرو بن عوف بقباء كان بينهم شىء، فخرج يصلح بينهم في أناس من أصحابه، فحبس رسول الله صلى الله عليه وسلم وحانت الصلاة، فجاء بلال إلى أبي بكر ـ رضى الله عنهما ـ فقال يا أبا بكر، إن رسول الله صلى الله عليه وسلم قد حبس وقد حانت الصلاة، فهل لك أن تؤم الناس قال نعم إن شئت‏.‏ فأقام بلال الصلاة، وتقدم أبو بكر ـ رضى الله عنه ـ فكبر للناس، وجاء رسول الله صلى اللهعليه وسلم  يمشي في الصفوف يشقها شقا، حتى قام في الصف، فأخذ الناس في التصفيح‏.‏ قال سهل التصفيح هو التصفيق‏.‏ قال وكان أبو بكر ـ رضى الله عنه ـ لا يلتفت في صلاته، فلما أكثر الناس التفت فإذا رسول الله صلى الله عليه وسلم فأشار إليه، يأمره أن يصلي، فرفع أبو بكر ـ رضى الله عنه ـ يده، فحمد الله، ثم رجع القهقرى وراءه حتى قام في الصف، وتقدم رسول الله صلى الله عليه وسلم فصلى للناس، فلما فرغ أقبل على الناس فقال ‏”‏ يا أيها الناس ما لكم حين نابكم شىء في الصلاة أخذتم بالتصفيح إنما التصفيح للنساء، من نابه شىء في صلاته فليقل سبحان الله ‏”‏‏.‏ ثم التفت إلى أبي بكر ـ رضى الله عنه ـ فقال ‏”‏ يا أبا بكر، ما منعك أن تصلي للناس حين أشرت إليك ‏”‏‏.‏ قال أبو بكر ما كان ينبغي لابن أبي قحافة أن يصلي بين يدى رسول الله صلى الله عليه وسلم‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

1218 ـ حدثنا قتیبۃ، حدثنا عبد العزیز، عن ابی حازم، عن سہل بن سعد ـ رضى اللہ عنہ ـ قال بلغ رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم ان بنی عمرو بن عوف بقباء کان بینہم شىء، فخرج یصلح بینہم فی اناس من اصحابہ، فحبس رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم وحانت الصلاۃ، فجاء بلال الى ابی بکر ـ رضى اللہ عنہما ـ فقال یا ابا بکر، ان رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم قد حبس وقد حانت الصلاۃ، فہل لک ان توم الناس قال نعم ان شئت‏.‏ فاقام بلال الصلاۃ، وتقدم ابو بکر ـ رضى اللہ عنہ ـ فکبر للناس، وجاء رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم یمشی فی الصفوف یشقہا شقا، حتى قام فی الصف، فاخذ الناس فی التصفیح‏.‏ قال سہل التصفیح ہو التصفیق‏.‏ قال وکان ابو بکر ـ رضى اللہ عنہ ـ لا یلتفت فی صلاتہ، فلما اکثر الناس التفت فاذا رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم فاشار الیہ، یامرہ ان یصلی، فرفع ابو بکر ـ رضى اللہ عنہ ـ یدہ، فحمد اللہ، ثم رجع القہقرى وراءہ حتى قام فی الصف، وتقدم رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم فصلى للناس، فلما فرغ اقبل على الناس فقال ‏”‏ یا ایہا الناس ما لکم حین نابکم شىء فی الصلاۃ اخذتم بالتصفیح انما التصفیح للنساء، من نابہ شىء فی صلاتہ فلیقل سبحان اللہ ‏”‏‏.‏ ثم التفت الى ابی بکر ـ رضى اللہ عنہ ـ فقال ‏”‏ یا ابا بکر، ما منعک ان تصلی للناس حین اشرت الیک ‏”‏‏.‏ قال ابو بکر ما کان ینبغی لابن ابی قحافۃ ان یصلی بین یدى رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم‏.‏

‏‏‏‏‏‏‏اردو ترجمہ:  

حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا :رسول اللہﷺ کو یہ خبر پہنچی کہ بنو عمرو بن عوف کے لوگوں میں آپس میں کچھ جھگڑا ہوا ہے۔ آپﷺ اپنے کئی اصحاب کے ساتھ ان میں صلح کرانے کو تشریف لے گئے۔ وہاں آپﷺ ٹھہر گئے اور ادھر نماز کا وقت آن پہنچا تو حضرت بلال رضی اللہ عنہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے پاس گئے اور کہنے لگے اے ابوبکر رضی اللہ عنہ! رسول اللہﷺ تو (بنو عمرو بن عوف کے لوگوں میں) پھنس گئے اور نماز کا وقت آن پہنچا ، آپ لوگوں کی امامت کریں ،انہوں نے کہا: اچھا اگر تم چاہتے ہو، خیر حضرت بلال رضی اللہ عنہ نے تکبیر کہی اور حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ آگے بڑھے اللہ اکبر کہا اتنے میں رسول اللہﷺ صفوں کو چیرتے ہوئے آن پہنچے اور چیرتے چیرتے پہلی صف میں آکھڑے ہوگئے، لوگوں نے تصفیح شروع کی۔حضرت سہل رضی اللہ عنہ نے کہا: تصفیح کہتے ہیں تالیان بجانے کو۔ حضرت سہل رضی اللہ عنہ نے کہا: حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ نماز میں اور کسی طرف دھیان نہیں دیتے تھے۔ جب لوگوں نے بہت تالیاں بجائیں تو متوجہ ہوکر دیکھتے ہیں کہ رسول اللہﷺ کھڑے ہیں۔ آپﷺنے حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کو اشارہ کیا تم نماز پڑھاؤ۔ انہوں نے دونوں ہاتھ اٹھا کر اللہ کا شکر ادا کیا پھر الٹے پاؤں سرک کر صف میں شریک ہو گئے اور رسول اللہﷺ آگے بڑھ گئے نماز پڑھائی۔ جب نماز سے فارغ ہوئے تو لوگوں کی طرف متوجہ ہوکر فرمایا: لوگو! تمہیں کیا ہوگیا جب نماز میں کوئی حادثہ پیش آتا ہے تو تالیاں بجانے لگتے ہو ،تالی بجانا تو عورتوں کا کام ہے۔ جس کو نماز میں کوئی حادثہ پیش آئے تو سبحان اللہ کہے، پھر آپﷺ نے حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ کی طرف دیکھا اور فرمایا : اے ابوبکر رضی اللہ عنہ !تم نے نماز کیوں نہ پڑھائی جب کہ میں نے تم کو اشارہ کر دیا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نےکہا: بھلا ابو قحافہ کے بیٹے کو یہ زیب دیتا ہے کہ اللہ کے رسولﷺ کے آگے نماز پڑھائے۔


حدیث کی اردو تشریح:   

تشریح : حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ نے رب کے سامنے ہاتھوں کو اٹھا کر الحمد للہ کہا۔ اس میں کچھ ہرج ہوتا تو آپ ضرور منع فرمادیتے اور اس سے حدیث کی مناسبت باب سے ظاہر ہوئی۔

English Translation: 

Narrated By Sahl bin Sad : The news about the differences amongst the people of Bani ‘Amr bin ‘Auf at Quba reached Allah’s Apostle and so he went to them along with some of his companions to affect a reconciliation. Allah’s Apostle was delayed there and the time for the prayer became due. Bilal came to Abu Bakr! and said, "O Abu Bakr! Allah’s Apostle is detained (there) and the time for the prayer is due. Will you lead the people in prayer?” Abu Bakr replied, "Yes, if you wish.” So Bilal pronounced the Iqama and Abu Bakr went forward and the people said Takbir. In the meantime, Allah’s Apostle came piercing through the rows till he stood in the (first) row and the people started clapping. Abu Bakr, would never look hither and thither during the prayer but when the people clapped much he looked back and saw Allah’s Apostle. The Prophet beckoned him to carry on. Abu Bakr raised both his hands, praised Allah and retreated till he stood in the row and Allah’s Apostle went forward and led the people in the prayer. When he had finished the prayer, he addressed the people and said, "O people! Why did you start clapping when something happened to you in the prayer? Clapping is for women. Whenever one is confronted with something unusual in the prayer one should say, ‘Sub Han Allah’.” Then the Prophet looked towards Abu Bakr and asked, "What prevented you from leading the prayer when I beckoned you to carry on?” Abu Bakr replied, "It does not befit the son of Al Quhafa to lead the prayer in the presence of Allah’s Apostle.”

Related Articles

Back to top button
Close