صحیح بخاریکتاب الاذان

صحیح بخاری جلد اول :كتاب الأذان(صفة الصلوة) (اذان کے مسائل کے بیان میں («صفة الصلوة»)) : حدیث:-874

كتاب الأذان (صفة الصلوة)
کتاب: اذان کے مسائل کے بیان میں («صفة الصلوة»)
The Book of Adhan (Sufa-tus-Salat)
166- بَابُ اسْتِئْذَانِ الْمَرْأَةِ زَوْجَهَا بِالْخُرُوجِ إِلَى الْمَسْجِدِ:
باب: عورت مسجد جانے کے لیے اپنے خاوند سے اجازت لے۔
(166) Chapter. A woman shall ask her husband’s permission (on wishing) to go to the mosque.
حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا ابْنُ عُيَيْنَةَ ، عَنْ إِسْحَاقَ ، عَنْ أَنَسٍ ، قَالَ : ” صَلَّى النَّبِيُّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمْ فِي بَيْتِ أُمِّ سُلَيْمٍ ، فَقُمْتُ وَيَتِيمٌ خَلْفَهُ ، وَأُمُّ سُلَيْمٍ خَلْفَنَا ” .

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:        

874 ـ حدثنا أبو نعيم، قال حدثنا ابن عيينة، عن إسحاق، عن أنس، قال صلى النبي صلى الله عليه وسلم في بيت أم سليم، فقمت ويتيم خلفه، وأم سليم خلفنا‏.‏

.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

874 ـ حدثنا ابو نعیم، قال حدثنا ابن عیینۃ، عن اسحاق، عن انس، قال صلى النبی صلى اللہ علیہ وسلم فی بیت ام سلیم، فقمت ویتیم خلفہ، وام سلیم خلفنا‏.‏

‏‏‏اردو ترجمہ:  

´ہم سے ابونعیم فضل بن دکین نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے سفیان بن عیینہ نے بیان کیا، ان سے اسحاق بن عبداللہ بن ابی طلحہ نے، ان سے انس رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ` نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے (میری ماں) ام سلیم کے گھر میں نماز پڑھائی۔ میں اور یتیم مل کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے کھڑے ہوئے اور ام سلیم رضی اللہ عنہا ہمارے پیچھے تھیں۔

حدیث کی اردو تشریح:   

 

English Translation: 

Narrated Anas:The Prophet prayed in the house of Um Sulaim; and I, along with an orphan stood behind him while Um Sulaim (stood) behind us.

Related Articles

Back to top button
Close