صحیح بخاریکتاب الاذان

صحیح بخاری جلد اول :كتاب الأذان(صفة الصلوة) (اذان کے مسائل کے بیان میں («صفة الصلوة»)) : حدیث:-875

كتاب الأذان (صفة الصلوة)
کتاب: اذان کے مسائل کے بیان میں («صفة الصلوة»)
The Book of Adhan (Sufa-tus-Salat)
166- بَابُ اسْتِئْذَانِ الْمَرْأَةِ زَوْجَهَا بِالْخُرُوجِ إِلَى الْمَسْجِدِ:
باب: عورت مسجد جانے کے لیے اپنے خاوند سے اجازت لے۔
(166) Chapter. A woman shall ask her husband’s permission (on wishing) to go to the mosque.
حَدَّثَنَا يَحْيَي بْنُ قَزَعَةَ ، حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْد ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنْ هِنْدَ بِنْتِ الْحَارِثِ ، عَنْ أُمِّ سَلْمَةَ ، قَالَتْ : ” كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمْ إِذَا قَامَ النِّسَاءُ حِينَ يَقْضِى تَسْلِيمَهُ وَهُوَ يَمْكُثُ فِي مَقَامِهِ يَسِيرًا قَبْلَ أَنْ يَقُومَ ، قَالَتْ : نُرَى وَاللهُ أَعْلَمُ أَنَّ ذَلِكَ كَانَ لِكَيْ يَنْصَرِفَ النِّسَاءُ قَبْلَ أَنْ يُدْرِكَهُنَّ الرِّجَالُ ” .

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:        

875 ـ حدثنا يحيى بن قزعة، حدثنا إبراهيم بن سعد، عن الزهري، عن هند بنت الحارث، عن أم سلمة، قالت كان رسول الله صلى الله عليه وسلم إذا سلم قام النساء حين يقضي تسليمه، وهو يمكث في مقامه يسيرا قبل أن يقوم‏.‏ قالت نرى ـ والله أعلم ـ أن ذلك كان لكى ينصرف النساء قبل أن يدركهن الرجال‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

875 ـ حدثنا یحیى بن قزعۃ، حدثنا ابراہیم بن سعد، عن الزہری، عن ہند بنت الحارث، عن ام سلمۃ، قالت کان رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم اذا سلم قام النساء حین یقضی تسلیمہ، وہو یمکث فی مقامہ یسیرا قبل ان یقوم‏.‏ قالت نرى ـ واللہ اعلم ـ ان ذلک کان لکى ینصرف النساء قبل ان یدرکہن الرجال‏.‏

‏‏‏اردو ترجمہ:  

´ہم سے یحییٰ بن قزعہ نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہم سے ابراہیم بن سعد نے بیان کیا، انہوں نے زہری سے بیان کیا، ان سے ہند بنت حارث نے بیان کیا، ان سے ام سلمہ رضی اللہ عنہا نے، انہوں نے فرمایا کہ` رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب سلام پھیرتے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے سلام پھیرتے ہی عورتیں جانے کے لیے اٹھ جاتی تھیں اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تھوڑی دیر ٹھہرے رہتے کھڑے نہ ہوتے۔ زہری نے کہا کہ ہم یہ سمجھتے ہیں، آگے اللہ جانے، یہ اس لیے تھا تاکہ عورتیں مردوں سے پہلے نکل جائیں۔

حدیث کی اردو تشریح:   

 

English Translation: 

Narrated Umm Salama: Whenever Allah’s Messenger (saws) completed the Salat with Taslim, the women used to get up immediately and Allah’s Messenger (saws) would remain at his place for sometime before getting up. The subnarrator (Az-Zuhri) said, "We think, and Allah knows better, that he did so, so that the women might leave before the men could catch up with them.”

Related Articles

Back to top button
Close