صحیح بخاریکتاب الکسوف

صحیح بخاری جلد دؤم :كتاب الكسوف (سورج گہن کے متعلق بیان) : حدیث:-1063

كتاب الكسوف
کتاب: سورج گہن کے متعلق بیان

Chapter No: 17

باب الصَّلاَةِ فِي كُسُوفِ الْقَمَرِ

The prayer of the lunar eclipse.

چاند گہن میں بھی نماز پڑھنا۔

[quote arrow=”yes” “]

1: حدیث اعراب کے ساتھ:[sta_anchor id=”top”]

2: حدیث عربی رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

3: حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

4: حدیث کا اردو ترجمہ:

5: حدیث کی اردو تشریح:

English Translation :6 

[/quote]

حدیث اعراب کے ساتھ:  [sta_anchor id=”artash”]

حدیث نمبر:1063          

حَدَّثَنَا أَبُو مَعْمَرٍ، قَالَ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، قَالَ حَدَّثَنَا يُونُسُ، عَنِ الْحَسَنِ، عَنْ أَبِي بَكْرَةَ، قَالَ خَسَفَتِ الشَّمْسُ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صلى الله عليه وسلم فَخَرَجَ يَجُرُّ رِدَاءَهُ حَتَّى انْتَهَى إِلَى الْمَسْجِدِ، وَثَابَ النَّاسُ إِلَيْهِ فَصَلَّى بِهِمْ رَكْعَتَيْنِ، فَانْجَلَتِ الشَّمْسُ فَقَالَ ‏”‏ إِنَّ الشَّمْسَ وَالْقَمَرَ آيَتَانِ مِنْ آيَاتِ اللَّهِ، وَإِنَّهُمَا لاَ يَخْسِفَانِ لِمَوْتِ أَحَدٍ، وَإِذَا كَانَ ذَاكَ فَصَلُّوا وَادْعُوا حَتَّى يُكْشَفَ مَا بِكُمْ ‏”‏‏.‏ وَذَاكَ أَنَّ ابْنًا لِلنَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم مَاتَ، يُقَالُ لَهُ إِبْرَاهِيمُ، فَقَالَ النَّاسُ فِي ذَالِكَ‏.‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏‏

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:  
[sta_anchor id=”arnotash”]

1063 ـ حدثنا أبو معمر، قال حدثنا عبد الوارث، قال حدثنا يونس، عن الحسن، عن أبي بكرة، قال خسفت الشمس على عهد رسول الله صلىالله عليه وسلم  فخرج يجر رداءه حتى انتهى إلى المسجد، وثاب الناس إليه فصلى بهم ركعتين، فانجلت الشمس فقال ‏”‏ إن الشمس والقمر آيتان من آيات الله، وإنهما لا يخسفان لموت أحد، وإذا كان ذاك فصلوا وادعوا حتى يكشف ما بكم ‏”‏‏.‏ وذاك أن ابنا للنبي صلى الله عليه وسلم مات، يقال له إبراهيم، فقال الناس في ذاك‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:   [sta_anchor id=”urnotash”]

1063 ـ حدثنا ابو معمر، قال حدثنا عبد الوارث، قال حدثنا یونس، عن الحسن، عن ابی بکرۃ، قال خسفت الشمس على عہد رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم فخرج یجر رداءہ حتى انتہى الى المسجد، وثاب الناس الیہ فصلى بہم رکعتین، فانجلت الشمس فقال ‏”‏ ان الشمس والقمر آیتان من آیات اللہ، وانہما لا یخسفان لموت احد، واذا کان ذاک فصلوا وادعوا حتى یکشف ما بکم ‏”‏‏.‏ وذاک ان ابنا للنبی صلى اللہ علیہ وسلم مات، یقال لہ ابراہیم، فقال الناس فی ذاک‏.‏

‏‏‏اردو ترجمہ:   [sta_anchor id=”urdtrjuma”]

حضرت ابوبکرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے کہا: رسول اللہﷺکے زمانے میں سورج گرہن ہوا تو آپﷺ اپنی چادر کھینچتے ہوئے نکلے، مسجد تک پہنچے اور لوگ بھی آپﷺ کے پاس جمع ہوگئے۔آپﷺ نے ان کو دو رکعتیں نماز پڑھائی۔ پھر سورج روشن ہوگیا۔آپﷺ نے فرمایا: سورج اور چاند اللہ کی نشانیوں میں سے دو نشانیاں ہیں۔ وہ کسی کی موت سے بےنور نہیں ہوتے، جب تم یہ دیکھو نماز پڑھو اور دعا کرتے رہو جب تک گرہن چھٹ جائے اور یہ آپﷺ نے اس لئے فرمایا: کہ آپﷺکے صاحبزادے جن کو ابراہیم کہتے تھے وفات پاگئے تھے۔ لوگ کہنے لگے: گرہن انہی کے مرنے سے لگا۔


حدیث کی اردو تشریح:   [sta_anchor id=”urdtashree”]

اس حدیث میں صاف چاند گرہن کا ذکر موجود ہے اور یہی مقصد باب ہے۔ 

English Translation:[sta_anchor id=”engtrans”] 

Narrated By Abu Bakra : In the life-time of the Allah’s Apostle (p.b.u.h) the sun eclipsed and he went out dragging his clothes till he reached the Mosque. The people gathered around him and he led them and offered two Rakat. When the sun (eclipse) cleared, he said, “The sun and the moon are two signs amongst the signs of Allah; they do not eclipse because of the death of someone, and so when an eclipse occurs, pray and invoke Allah till the eclipse is over.” It happened that a son of the Prophet called Ibrahim died on that day and the people were talking about that (saying that the eclipse was caused by his death).

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

*

code

Back to top button
Close