صحیح بخاریکتاب الجنائز

صحیح بخاری جلد دؤم : کتاب الجنائز( جنازے کے احکام و مسائل) : حدیث:-1367

کتاب الجنائز
کتاب: جنازے کے احکام و مسائل

Chapter No: 85

باب ثَنَاءِ النَّاسِ عَلَى الْمَيِّتِ

The praising of a deceased by the people.

باب: میت کی تعریف کرنا جائز ہے۔

[quote arrow=”yes” "] 1: حدیث اعراب کے ساتھ:

2: حدیث عربی رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

3: حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

4: حدیث کا اردو ترجمہ:

5: حدیث کی اردو تشریح:

English Translation :6 

[/quote]

حدیث اعراب کے ساتھ:  

حدیث نمبر:1367         

حَدَّثَنَا آدَمُ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ صُهَيْبٍ، قَالَ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ مَرُّوا بِجَنَازَةٍ فَأَثْنَوْا عَلَيْهَا خَيْرًا، فَقَالَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏”‏ وَجَبَتْ ‏”‏‏.‏ ثُمَّ مَرُّوا بِأُخْرَى فَأَثْنَوْا عَلَيْهَا شَرًّا فَقَالَ ‏”‏ وَجَبَتْ ‏”‏‏.‏ فَقَالَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ ـ رضى الله عنه ـ مَا وَجَبَتْ قَالَ ‏”‏ هَذَا أَثْنَيْتُمْ عَلَيْهِ خَيْرًا فَوَجَبَتْ لَهُ الْجَنَّةُ، وَهَذَا أَثْنَيْتُمْ عَلَيْهِ شَرًّا فَوَجَبَتْ لَهُ النَّارُ، أَنْتُمْ شُهَدَاءُ اللَّهِ فِي الأَرْضِ ‏”‏‏.‏

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:    

1367 – حدثنا آدم، حدثنا شعبة، حدثنا عبد العزيز بن صهيب، قال سمعت أنس بن مالك ـ رضى الله عنه ـ يقول مروا بجنازة فأثنوا عليها خيرا، فقال النبي صلى الله عليه وسلم ‏”‏ وجبت ‏”‏‏.‏ ثم مروا بأخرى فأثنوا عليها شرا فقال ‏”‏ وجبت ‏”‏‏.‏ فقال عمر بن الخطاب ـ رضى الله عنه ـ ما وجبت قال ‏”‏ هذا أثنيتم عليه خيرا فوجبت له الجنة، وهذا أثنيتم عليه شرا فوجبت له النار، أنتم شهداء الله في الأرض ‏”‏‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

1367 ـ حدثنا آدم، حدثنا شعبۃ، حدثنا عبد العزیز بن صہیب، قال سمعت انس بن مالک ـ رضى اللہ عنہ ـ یقول مروا بجنازۃ فاثنوا علیہا خیرا، فقال النبی صلى اللہ علیہ وسلم ‏”‏ وجبت ‏”‏‏.‏ ثم مروا باخرى فاثنوا علیہا شرا فقال ‏”‏ وجبت ‏”‏‏.‏ فقال عمر بن الخطاب ـ رضى اللہ عنہ ـ ما وجبت قال ‏”‏ ہذا اثنیتم علیہ خیرا فوجبت لہ الجنۃ، وہذا اثنیتم علیہ شرا فوجبت لہ النار، انتم شہداء اللہ فی الارض ‏”‏‏.‏

‏‏‏‏‏‏‏اردو ترجمہ:  

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ لوگ ایک جنازے سے گزرے تو اس کی تعریف کی (کیا اچھا آدمی تھا) نبیﷺ نے یہ سن کر فرمایا: واجب ہوگئی۔پھر ایک جنازے پر سے گزرے تو لوگوں نے اس کی برائی کی آپﷺ نے فرمایا: واجب ہوگئی۔حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے پوچھا کیا چیز واجب ہوگئی؟آپﷺ نے فرمایا: پہلے شخص کی تم نے تعریف کی تو اس کےلیے جنت واجب ہوگئی اور دوسرے کی تم نے برائی کی تو اس کےلیے دوزخ واجب ہوگئی۔ تم لوگ زمین میں اللہ کے گواہ ہو۔

حدیث کی اردو تشریح:   

 

English Translation: 

Narrated By Anas bin Malik : A funeral procession passed and the people praised the deceased. The Prophet said, "It has been affirmed to him.” Then another funeral procession passed and the people spoke badly of the deceased. The Prophet said, "It has been affirmed to him”. ‘Umar bin Al-Khattab asked (Allah’s Apostle (p.b.u.h)), "What has been affirmed?” He replied, "You praised this, so Paradise has been affirmed to him; and you spoke badly of this, so Hell has been affirmed to him. You people are Allah’s witnesses on earth.”

Related Articles

Back to top button
Close