صحیح بخاریکتاب الحیض

صحیح بخاری جلد اول :كتاب الحيض (حيض کا بیان) : حدیث 328

كتاب الحيض
کتاب: حیض کے احکام و مسائل

(THE BOOK OF MENSES (MENSTRUAL PERIODS

27- بَابُ الْمَرْأَةِ تَحِيضُ بَعْدَ الإِفَاضَةِ:
باب: جو عورت (حج میں) طواف افاضہ کے بعد حائضہ ہو (اس کے متعلق کیا حکم ہے؟)۔

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي بَكْرِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَمْرِو بْنِ حَزْمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرَةَ بِنْتِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ زَوْجِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهَا قَالَتْ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏”إِنَّ صَفِيَّةَ بِنْتَ حُيَيٍّ قَدْ حَاضَتْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَعَلَّهَا تَحْبِسُنَا أَلَمْ تَكُنْ طَافَتْ مَعَكُنَّ؟ فَقَالُوا:‏‏‏‏ بَلَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَاخْرُجِي”.

الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:         

328 ـ حدثنا عبد الله بن يوسف، أخبرنا مالك، عن عبد الله بن أبي بكر بن محمد بن عمرو بن حزم، عن أبيه، عن عمرة بنت عبد الرحمن، عن عائشة، زوج النبي صلى الله عليه وسلم أنها قالت لرسول الله صلى الله عليه وسلم يا رسول الله، إن صفية بنت حيى قد حاضت‏.‏ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم ‏”‏ لعلها تحبسنا، ألم تكن طافت معكن ‏”‏‏.‏ فقالوا بلى‏.‏ قال ‏”‏ فاخرجي ‏”‏‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

328 ـ حدثنا عبد اللہ بن یوسف، اخبرنا مالک، عن عبد اللہ بن ابی بکر بن محمد بن عمرو بن حزم، عن ابیہ، عن عمرۃ بنت عبد الرحمن، عن عایشۃ، زوج النبی صلى اللہ علیہ وسلم انہا قالت لرسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم یا رسول اللہ، ان صفیۃ بنت حیى قد حاضت‏.‏ قال رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم ‏”‏ لعلہا تحبسنا، الم تکن طافت معکن ‏”‏‏.‏ فقالوا بلى‏.‏ قال ‏”‏ فاخرجی ‏”‏‏.‏

ا اردو ترجمہ:  

ہم سے عبداللہ بن یوسف تنیسی نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہمیں امام مالک نے خبر دی، انہوں نے عبداللہ بن ابی بکر بن عمرو بن حزم سے، انہوں نے اپنے باپ ابوبکر سے، انہوں نے عبدالرحمٰن کی بیٹی عمرہ سے، انہوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی زوجہ مطہرہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے کہ انھوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا کہ یا رسول اللہ! صفیہ بنت حیی رضی اللہ عنہا کو (حج میں) حیض آ گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، شاید کہ وہ ہمیں روکیں گی۔ کیا انہوں نے تمہارے ساتھ طواف (زیارت) نہیں کیا۔ عورتوں نے جواب دیا کہ کر لیا ہے۔ آپ نے اس پر فرمایا کہ پھر نکلو۔

حدیث کی اردو تشریح:   

تشریح : اسی کو طواف الافاضہ بھی کہتے ہیں۔یہ دسویں تاریخ کو منیٰ سے آکر کیا جاتا ہے۔ یہ طواف فرض ہے اور حج کا ایک رکن ہے، لیکن طواف الوداع جو حاجی کعبہ شریف سے رخصتی کے وقت کرتے ہیں، وہ فرض نہیں ہے۔ اس لیے وہ حائضہ کے واسطے معاف ہے۔

English Translation: 

Narrated `Aisha: (the wife of the Prophet) I told Allah’s Apostle that Safiya bint Huyai had got her menses. He said, "She will probably delay us. Did she perform Tawaf (Al-Ifada) with you?” We replied, "Yes.” On that the Prophet told her to depart.

Related Articles

Back to top button
Close