صحیح بخاریکتاب التہجد

صحیح بخاری جلد دؤم :کتاب التہجد ( رات میں تہجد پڑھنا) : حدیث:-1130

کتاب التہجد
کتاب: رات میں تہجد پڑھنا

Chapter No: 6

باب قِيَامِ النَّبِيِّ صلى الله عليه وسلم حَتَّى تَرِمَ قَدَمَاهُ

Standing of the Prophet (s.a.w) (for the prayer) at night.

باب: نبی ﷺرات کو نماز میں اتنا زیادہ کھڑے رہتے کہ آپﷺ کے پاؤں سوج جاتے.

وَقَالَتْ عَائِشَةُ ـ رضى الله عنها ـ حَتَّى تَفَطَّرَ قَدَمَاهُ وَقَالَتْ عَائِشَةُ ـ رضى الله عنها ـ حَتَّى تَفَطَّرَ قَدَمَاهُ وَالْفُطُورُ الشُّقُوقُ، ‏{‏انْفَطَرَتْ‏}‏ انْشَقَّتْ‏.

.Aisha narrated that the Prophet (s.a.w) used to offer prayer till his feet used to be swollen

اور حضرت عائشہؓ نے کہا یہاں تک کہ آپﷺ کے پاؤں پھٹ جاتے فطور کے معنی عربی زبان میں پھٹنا ،اسی سے انفطرت قرآن میں یعنی پھٹ جائے ۔

 

[quote arrow=”yes” “]

1: حدیث اعراب کے ساتھ:[sta_anchor id=”top”]

2: حدیث عربی رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

3: حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:

4: حدیث کا اردو ترجمہ:

5: حدیث کی اردو تشریح:

English Translation :6 

[/quote]

حدیث اعراب کے ساتھ:  [sta_anchor id=”artash”]

حدیث نمبر:1130          

حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، قَالَ حَدَّثَنَا مِسْعَرٌ، عَنْ زِيَادٍ، قَالَ سَمِعْتُ الْمُغِيرَةَ ـ رضى الله عنه ـ يَقُولُ إِنْ كَانَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم لَيَقُومُ لِيُصَلِّيَ حَتَّى تَرِمُ قَدَمَاهُ أَوْ سَاقَاهُ، فَيُقَالُ لَهُ فَيَقُولُ ‏”‏ أَفَلاَ أَكُونُ عَبْدًا شَكُورًا ‏”.

.حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:  
[sta_anchor id=”arnotash”]

1130 ـ حدثنا أبو نعيم، قال حدثنا مسعر، عن زياد، قال سمعت المغيرة ـ رضى الله عنه ـ يقول إن كان النبي صلى الله عليه وسلم ليقوم ليصلي حتى ترم قدماه أو ساقاه، فيقال له فيقول ‏”‏ أفلا أكون عبدا شكورا ‏”‏‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:   [sta_anchor id=”urnotash”]

1130 ـ حدثنا ابو نعیم، قال حدثنا مسعر، عن زیاد، قال سمعت المغیرۃ ـ رضى اللہ عنہ ـ یقول ان کان النبی صلى اللہ علیہ وسلم لیقوم لیصلی حتى ترم قدماہ او ساقاہ، فیقال لہ فیقول ‏”‏ افلا اکون عبدا شکورا ‏”‏‏.‏

‏‏‏اردو ترجمہ:   [sta_anchor id=”urdtrjuma”]

حضرت مغیرہ بن شعبہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبیﷺ اتنی دیر تک کھڑے ہوکر نماز پڑھتے کہ آپﷺ کے پاؤں یا پنڈلیوں پر ورم ہوجاتا۔ جب آپﷺ سے اس بارے میں کہا جاتا تو آپﷺ فرماتے کیا میں اللہ کا شکر گزار بندہ نہ بنوں؟۔


حدیث کی اردو تشریح:   [sta_anchor id=”urdtashree”]

سورۃ مزمل کے شروع نزول کے زمانہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہی معمول تھا کہ رات کے اکثر حصوں میں آپ عبادت میں مشغول رہتے تھے۔

 

English Translation:[sta_anchor id=”engtrans”] 

Narrated By Al-Mughira : The Prophet used to stand (in the prayer) or pray till both his feet or legs swelled. He was asked why (he offered such an unbearable prayer) and he said, “should I not be a thankful slave.”

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

*

code

Back to top button
Close