Deprecated: version_compare(): Passing null to parameter #2 ($version2) of type string is deprecated in /home/u482667647/domains/ihyas.com/public_html/DifaeHadith/wp-content/plugins/elementor/core/experiments/manager.php on line 170
صحیح بخاری - حدیث نمبر 112 - Difae Hadith - دفاع حدیث

صحیح بخاری – حدیث نمبر 112

صحیح بخاری – حدیث نمبر 112

(دینی) علم کو قلم بند کرنے کے جواز میں

حدیث نمبر: 112
حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ الْفَضْلُ بْنُ دُكَيْنٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شَيْبَانُ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَلَمَةَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ خُزَاعَةَ قَتَلُوا رَجُلًا مِنْ بَنِي لَيْثٍ عَامَ فَتْحِ مَكَّةَ بِقَتِيلٍ مِنْهُمْ قَتَلُوهُ، ‏‏‏‏‏‏فَأُخْبِرَ بِذَلِكَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَرَكِبَ رَاحِلَتَهُ فَخَطَبَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ حَبَسَ عَنْ مَكَّةَ الْقَتْلَ أَوِ الْفِيلَ، ‏‏‏‏‏‏شَكَّ أَبُو عَبْد اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏كَذَا قَالَ أَبُو نُعَيْمٍ:‏‏‏‏ وَاجْعَلُوهُ عَلَى الشَّكِّ الْفِيلَ أَوِ الْقَتْلَ، ‏‏‏‏‏‏وَغَيْرُهُ يَقُولُ:‏‏‏‏ الْفِيلَ، ‏‏‏‏‏‏وَسَلَّطَ عَلَيْهِمْ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَالْمُؤْمِنِينَ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا وَإِنَّهَا لَمْ تَحِلُّ لِأَحَدٍ قَبْلِي وَلَمْ تَحِلَّ لِأَحَدٍ بَعْدِي، ‏‏‏‏‏‏أَلَا وَإِنَّهَا حَلَّتْ لِي سَاعَةً مِنْ نَهَارٍ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا وَإِنَّهَا سَاعَتِي هَذِهِ حَرَامٌ لَا يُخْتَلَى شَوْكُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يُعْضَدُ شَجَرُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَلَا تُلْتَقَطُ سَاقِطَتُهَا إِلَّا لِمُنْشِدٍ، ‏‏‏‏‏‏فَمَنْ قُتِلَ فَهُوَ بِخَيْرِ النَّظَرَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏إِمَّا أَنْ يُعْقَلَ وَإِمَّا أَنْ يُقَادَ أَهْلُ الْقَتِيلِ، ‏‏‏‏‏‏فَجَاءَ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ الْيَمَنِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اكْتُبْ لِي يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اكْتُبُوا لِأَبِي فُلَانٍ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَجُلٌ مِنْ قُرَيْشٍ:‏‏‏‏ إِلَّا الْإِذْخِرَ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّا نَجْعَلُهُ فِي بُيُوتِنَا وَقُبُورِنَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِلَّا الْإِذْخِرَ إِلَّا الْإِذْخِرَقَالَ أَبُو عَبْد اللَّهِ:‏‏‏‏ يُقَالُ يُقَادُ بِالْقَافِ، ‏‏‏‏‏‏فَقِيلَ لِأَبِي عَبْدِ اللَّهِ:‏‏‏‏ أَيُّ شَيْءٍ كَتَبَ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَتَبَ لَهُ هَذِهِ الْخُطْبَةَ.

حدیث کی عربی عبارت (بغیر اعراب)

حدیث نمبر: 112
حدثنا أبو نعيم الفضل بن دكين ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا شيبان ، ‏‏‏‏‏‏عن يحيى ، ‏‏‏‏‏‏عن أبي سلمة ، ‏‏‏‏‏‏عن أبي هريرة ، ‏‏‏‏‏‏أن خزاعة قتلوا رجلا من بني ليث عام فتح مكة بقتيل منهم قتلوه، ‏‏‏‏‏‏فأخبر بذلك النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فركب راحلته فخطب، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ إن الله حبس عن مكة القتل أو الفيل، ‏‏‏‏‏‏شك أبو عبد الله، ‏‏‏‏‏‏كذا قال أبو نعيم:‏‏‏‏ واجعلوه على الشك الفيل أو القتل، ‏‏‏‏‏‏وغيره يقول:‏‏‏‏ الفيل، ‏‏‏‏‏‏وسلط عليهم رسول الله صلى الله عليه وسلم والمؤمنين، ‏‏‏‏‏‏ألا وإنها لم تحل لأحد قبلي ولم تحل لأحد بعدي، ‏‏‏‏‏‏ألا وإنها حلت لي ساعة من نهار، ‏‏‏‏‏‏ألا وإنها ساعتي هذه حرام لا يختلى شوكها، ‏‏‏‏‏‏ولا يعضد شجرها، ‏‏‏‏‏‏ولا تلتقط ساقطتها إلا لمنشد، ‏‏‏‏‏‏فمن قتل فهو بخير النظرين، ‏‏‏‏‏‏إما أن يعقل وإما أن يقاد أهل القتيل، ‏‏‏‏‏‏فجاء رجل من أهل اليمن، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ اكتب لي يا رسول الله، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ اكتبوا لأبي فلان، ‏‏‏‏‏‏فقال رجل من قريش:‏‏‏‏ إلا الإذخر يا رسول الله، ‏‏‏‏‏‏فإنا نجعله في بيوتنا وقبورنا، ‏‏‏‏‏‏فقال النبي صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ إلا الإذخر إلا الإذخرقال أبو عبد الله:‏‏‏‏ يقال يقاد بالقاف، ‏‏‏‏‏‏فقيل لأبي عبد الله:‏‏‏‏ أي شيء كتب له، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ كتب له هذه الخطبة.

حدیث کی عربی عبارت (مکمل اردو حروف تہجی میں)

حدیث نمبر: 112
حدثنا ابو نعیم الفضل بن دکین ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا شیبان ، ‏‏‏‏‏‏عن یحیى ، ‏‏‏‏‏‏عن ابی سلمۃ ، ‏‏‏‏‏‏عن ابی ہریرۃ ، ‏‏‏‏‏‏ان خزاعۃ قتلوا رجلا من بنی لیث عام فتح مکۃ بقتیل منہم قتلوہ، ‏‏‏‏‏‏فاخبر بذلک النبی صلى اللہ علیہ وسلم، ‏‏‏‏‏‏فرکب راحلتہ فخطب، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ ان اللہ حبس عن مکۃ القتل او الفیل، ‏‏‏‏‏‏شک ابو عبد اللہ، ‏‏‏‏‏‏کذا قال ابو نعیم:‏‏‏‏ واجعلوہ على الشک الفیل او القتل، ‏‏‏‏‏‏وغیرہ یقول:‏‏‏‏ الفیل، ‏‏‏‏‏‏وسلط علیہم رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم والمومنین، ‏‏‏‏‏‏الا وانہا لم تحل لاحد قبلی ولم تحل لاحد بعدی، ‏‏‏‏‏‏الا وانہا حلت لی ساعۃ من نہار، ‏‏‏‏‏‏الا وانہا ساعتی ہذہ حرام لا یختلى شوکہا، ‏‏‏‏‏‏ولا یعضد شجرہا، ‏‏‏‏‏‏ولا تلتقط ساقطتہا الا لمنشد، ‏‏‏‏‏‏فمن قتل فہو بخیر النظرین، ‏‏‏‏‏‏اما ان یعقل واما ان یقاد اہل القتیل، ‏‏‏‏‏‏فجاء رجل من اہل الیمن، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ اکتب لی یا رسول اللہ، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ اکتبوا لابی فلان، ‏‏‏‏‏‏فقال رجل من قریش:‏‏‏‏ الا الاذخر یا رسول اللہ، ‏‏‏‏‏‏فانا نجعلہ فی بیوتنا وقبورنا، ‏‏‏‏‏‏فقال النبی صلى اللہ علیہ وسلم:‏‏‏‏ الا الاذخر الا الاذخرقال ابو عبد اللہ:‏‏‏‏ یقال یقاد بالقاف، ‏‏‏‏‏‏فقیل لابی عبد اللہ:‏‏‏‏ ای شیء کتب لہ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ کتب لہ ہذہ الخطبۃ.

حدیث کا اردو ترجمہ

ہم سے ابونعیم الفضل بن دکین نے بیان کیا، ان سے شیبان نے یحییٰ کے واسطے سے نقل کیا، وہ ابوسلمہ سے، وہ ابوہریرہ (رض) سے روایت کرتے ہیں کہ قبیلہ خزاعہ (کے کسی شخص) نے بنو لیث کے کسی آدمی کو اپنے کسی مقتول کے بدلے میں مار دیا تھا، یہ فتح مکہ والے سال کی بات ہے، رسول اللہ کو یہ خبر دی گئی، آپ نے اپنی اونٹنی پر سوار ہو کر خطبہ پڑھا اور فرمایا کہ اللہ نے مکہ سے قتل یا ہاتھی کو روک لیا۔ امام بخاری (رح) فرماتے ہیں اس لفظ کو شک کے ساتھ سمجھو، ایسا ہی ابونعیم وغیرہ نے القتل اور الفيل کہا ہے۔ ان کے علاوہ دوسرے لوگ الفيل کہتے ہیں۔ (پھر رسول اللہ نے فرمایا) کہ اللہ نے ان پر اپنے رسول اور مسلمان کو غالب کردیا اور سمجھ لو کہ وہ (مکہ) کسی کے لیے حلال نہیں ہوا۔ نہ مجھ سے پہلے اور نہ (آئندہ) کبھی ہوگا اور میرے لیے بھی صرف دن کے تھوڑے سے حصہ کے لیے حلال کردیا گیا تھا۔ سن لو کہ وہ اس وقت حرام ہے۔ نہ اس کا کوئی کانٹا توڑا جائے، نہ اس کے درخت کاٹے جائیں اور اس کی گری پڑی چیزیں بھی وہی اٹھائے جس کا منشاء یہ ہو کہ وہ اس چیز کا تعارف کرا دے گا۔ تو اگر کوئی شخص مارا جائے تو (اس کے عزیزوں کو) اختیار ہے دو باتوں کا، یا دیت لیں یا بدلہ۔ اتنے میں ایک یمنی آدمی (ابوشاہ نامی) آیا اور کہنے لگا (یہ مسائل) میرے لیے لکھوا دیجیئے۔ تب آپ نے فرمایا کہ ابوفلاں کے لیے (یہ مسائل) لکھ دو ۔ تو ایک قریشی شخص نے کہا کہ یا رسول اللہ ! مگر اذخر (یعنی اذخر کاٹنے کی اجازت دے دیجیئے) کیونکہ اسے ہم گھروں کی چھتوں پر ڈالتے ہیں۔ (یا مٹی ملا کر) اور اپنی قبروں میں بھی ڈالتے ہیں (یہ سن کر) رسول اللہ نے فرمایا کہ (ہاں) مگر اذخر، مگر اذخر۔

حدیث کا انگریزی ترجمہ (English Translation)

Narrated Abu Hurairah (RA): In the year of the Conquest of Makkah, the tribe of Khuzaa killed a man from the tribe of Bani Laith in revenge for a killed person, belonging to them. They informed the Prophet ﷺ about it. So he rode his Rahila (she-camel for riding) and addressed the people saying, "Allah held back the killing from Makkah. (The sub-narrator is in doubt whether the Prophet ﷺ said "elephant or killing,” as the Arabic words standing for these words have great similarity in shape), but He (Allah) let His Apostle ﷺ and the believers over power the infidels of Makkah. Beware! (Makkah is a sanctuary) Verily! Fighting in Makkah was not permitted for anyone before me nor will it be permitted for anyone after me. It (war) in it was made legal for me for few hours or so on that day. No doubt it is at this moment a sanctuary, it is not allowed to uproot its thorny shrubs or to uproot its trees or to pick up its Luqatt (fallen things) except by a person who will look for its owner (announce it publicly). And if somebody is killed, then his closest relative has the right to choose one of the two– the blood money (Diyya) or retaliation having the killer killed. In the meantime a man from Yemen came and said, "O Allahs Apostle ﷺ ! Get that written for me.” The Prophet ﷺ ordered his companions to write that for him. Then a man from Quraish said, "Except Al-Iqhkhir (a type of grass that has good smell) O Allahs Apostle, as we use it in our houses and graves.” The Prophet ﷺ said, "Except Al-Idhkhiri.e. Al-Idhkhir is allowed to be plucked.”

اس پوسٹ کو آگے نشر کریں