صحیح بخاری – حدیث نمبر 40

صحیح بخاری – حدیث نمبر 40

نماز ایمان کا جزو ہے

حدیث نمبر: 40
حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ خَالِدٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زُهَيْرٌ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاقَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ أَوَّلَ مَا قَدِمَ الْمَدِينَةَ نَزَلَ عَلَى أَجْدَادِهِ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْوَالِهِ مِنْ الْأَنْصَارِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنَّهُ صَلَّى قِبَلَ بَيْتِ الْمَقْدِسِ سِتَّةَ عَشَرَ شَهْرًا أَوْ سَبْعَةَ عَشَرَ شَهْرًا، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ يُعْجِبُهُ أَنْ تَكُونَ قِبْلَتُهُ قِبَلَ الْبَيْتِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنَّهُ صَلَّى أَوَّلَ صَلَاةٍ صَلَّاهَا صَلَاةَ الْعَصْرِ وَصَلَّى مَعَهُ قَوْمٌ، ‏‏‏‏‏‏فَخَرَجَ رَجُلٌ مِمَّنْ صَلَّى مَعَهُ فَمَرَّ عَلَى أَهْلِ مَسْجِدٍ وَهُمْ رَاكِعُونَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَشْهَدُ بِاللَّهِ لَقَدْ صَلَّيْتُ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قِبَلَ مَكَّةَ فَدَارُوا كَمَا هُمْ قِبَلَ الْبَيْتِ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَتْ الْيَهُودُ قَدْ أَعْجَبَهُمْ إِذْ كَانَ يُصَلِّي قِبَلَ بَيْتِ الْمَقْدِسِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَهْلُ الْكِتَابِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا وَلَّى وَجْهَهُ قِبَلَ الْبَيْتِ أَنْكَرُوا ذَلِكَ. قَالَ قَالَ زُهَيْرٌ :‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاقَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْبَرَاءِ فِي حَدِيثِهِ هَذَا، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ مَاتَ عَلَى الْقِبْلَةِ قَبْلَ أَنْ تُحَوَّلَ رِجَالٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقُتِلُوا فَلَمْ نَدْرِ مَا نَقُولُ فِيهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَأَنْزَلَ اللَّهُ تَعَالَى:‏‏‏‏ وَمَا كَانَ اللَّهُ لِيُضِيعَ إِيمَانَكُمْ سورة البقرة آية 143.

حدیث کی عربی عبارت (بغیر اعراب)

حدیث نمبر: 40
حدثنا عمرو بن خالد ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا زهير ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا أبو إسحاق ، ‏‏‏‏‏‏عن البراء بن عازب ، ‏‏‏‏‏‏أن النبي صلى الله عليه وسلم كان أول ما قدم المدينة نزل على أجداده، ‏‏‏‏‏‏أو قال:‏‏‏‏ أخواله من الأنصار، ‏‏‏‏‏‏وأنه صلى قبل بيت المقدس ستة عشر شهرا أو سبعة عشر شهرا، ‏‏‏‏‏‏وكان يعجبه أن تكون قبلته قبل البيت، ‏‏‏‏‏‏وأنه صلى أول صلاة صلاها صلاة العصر وصلى معه قوم، ‏‏‏‏‏‏فخرج رجل ممن صلى معه فمر على أهل مسجد وهم راكعون، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ أشهد بالله لقد صليت مع رسول الله صلى الله عليه وسلم قبل مكة فداروا كما هم قبل البيت، ‏‏‏‏‏‏وكانت اليهود قد أعجبهم إذ كان يصلي قبل بيت المقدس، ‏‏‏‏‏‏وأهل الكتاب، ‏‏‏‏‏‏فلما ولى وجهه قبل البيت أنكروا ذلك. قال قال زهير :‏‏‏‏ حدثنا أبو إسحاق ، ‏‏‏‏‏‏عن البراء في حديثه هذا، ‏‏‏‏‏‏أنه مات على القبلة قبل أن تحول رجال، ‏‏‏‏‏‏وقتلوا فلم ندر ما نقول فيهم، ‏‏‏‏‏‏فأنزل الله تعالى:‏‏‏‏ وما كان الله ليضيع إيمانكم سورة البقرة آية 143.

حدیث کی عربی عبارت (مکمل اردو حروف تہجی میں)

حدیث نمبر: 40
حدثنا عمرو بن خالد ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا زہیر ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حدثنا ابو اسحاق ، ‏‏‏‏‏‏عن البراء بن عازب ، ‏‏‏‏‏‏ان النبی صلى اللہ علیہ وسلم کان اول ما قدم المدینۃ نزل على اجدادہ، ‏‏‏‏‏‏او قال:‏‏‏‏ اخوالہ من الانصار، ‏‏‏‏‏‏وانہ صلى قبل بیت المقدس ستۃ عشر شہرا او سبعۃ عشر شہرا، ‏‏‏‏‏‏وکان یعجبہ ان تکون قبلتہ قبل البیت، ‏‏‏‏‏‏وانہ صلى اول صلاۃ صلاہا صلاۃ العصر وصلى معہ قوم، ‏‏‏‏‏‏فخرج رجل ممن صلى معہ فمر على اہل مسجد وہم راکعون، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ اشہد باللہ لقد صلیت مع رسول اللہ صلى اللہ علیہ وسلم قبل مکۃ فداروا کما ہم قبل البیت، ‏‏‏‏‏‏وکانت الیہود قد اعجبہم اذ کان یصلی قبل بیت المقدس، ‏‏‏‏‏‏واہل الکتاب، ‏‏‏‏‏‏فلما ولى وجہہ قبل البیت انکروا ذلک. قال قال زہیر :‏‏‏‏ حدثنا ابو اسحاق ، ‏‏‏‏‏‏عن البراء فی حدیثہ ہذا، ‏‏‏‏‏‏انہ مات على القبلۃ قبل ان تحول رجال، ‏‏‏‏‏‏وقتلوا فلم ندر ما نقول فیہم، ‏‏‏‏‏‏فانزل اللہ تعالى:‏‏‏‏ وما کان اللہ لیضیع ایمانکم سورۃ البقرۃ آیۃ 143.

حدیث کا اردو ترجمہ

ہم سے عمرو بن خالد نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے زہیر نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے ابواسحاق نے بیان کیا، ان کو براء بن عازب (رض) نے خبر دی کہ رسول اللہ جب مدینہ تشریف لائے تو پہلے اپنی نانہال میں اترے، جو انصار تھے۔ اور وہاں آپ نے سولہ یا سترہ ماہ بیت المقدس کی طرف منہ کر کے نماز پڑھی اور آپ کی خواہش تھی کہ آپ کا قبلہ بیت اللہ کی طرف ہو (جب بیت اللہ کی طرف نماز پڑھنے کا حکم ہوگیا) تو سب سے پہلی نماز جو آپ نے بیت اللہ کی طرف پڑھی عصر کی نماز تھی۔ وہاں آپ کے ساتھ لوگوں نے بھی نماز پڑھی، پھر آپ کے ساتھ نماز پڑھنے والوں میں سے ایک آدمی نکلا اور اس کا مسجد (بنی حارثہ) کی طرف گزر ہوا تو وہ لوگ رکوع میں تھے۔ وہ بولا کہ میں اللہ کی گواہی دیتا ہوں کہ میں نے رسول اللہ کے ساتھ مکہ کی طرف منہ کر کے نماز پڑھی ہے۔ (یہ سن کر) وہ لوگ اسی حالت میں بیت اللہ کی طرف گھوم گئے اور جب رسول اللہ بیت المقدس کی طرف منہ کر کے نماز پڑھا کرتے تھے، یہود اور عیسائی خوش ہوتے تھے مگر جب آپ نے بیت اللہ کی طرف منہ پھیرلیا تو انہیں یہ امر ناگوار ہوا۔ زہیر (ایک راوی) کہتے ہیں کہ ہم سے ابواسحاق نے براء سے یہ حدیث بھی نقل کی ہے کہ قبلہ کی تبدیلی سے پہلے کچھ مسلمان انتقال کرچکے تھے۔ تو ہمیں یہ معلوم نہ ہوسکا کہ ان کی نمازوں کے بارے میں کیا کہیں۔ تب اللہ نے یہ آیت نازل کی وما کان الله ليضيع إيمانکم‏ (البقرہ : 143) ۔

حدیث کا انگریزی ترجمہ (English Translation)

Narrated Al-Bara (bin Azib): When the Prophet ﷺ came to Medina, he stayed first with his grandfathers or maternal uncles from Ansar. He offered his prayers facing Baitul-Maqdis (Jerusalem) for sixteen or seventeen months, but he wished that he could pray facing the Ka’bah (at Makkah). The first prayer which he offered facing the Ka’bah was the Asr prayer in the company of some people. Then one of those who had offered that prayer with him came out and passed by some people in a mosque who were bowing during their prayers (facing Jerusalem). He said addressing them, "By Allah, I testify that I have prayed with Allahs Apostle ﷺ facing Makkah (Ka’bah). Hearing that, those people changed their direction towards the Ka’bah immediately. Jews and the people of the scriptures used to be pleased to see the Prophet ﷺ facing Jerusalem in prayers but when he changed his direction towards the Ka’bah, during the prayers, they disapproved of it.
Al-Bara added, "Before we changed our direction towards the Ka’bah (Makkah) in prayers, some Muslims had died or had been killed and we did not know what to say about them (regarding their prayers.) Allah then revealed: And Allah would never make your faith (prayers) to be lost (i.e. the prayers of those Muslims were valid). ” (2:143).

اس پوسٹ کو آگے نشر کریں