صحیح بخاریکتاب الصلاۃ

صحیح بخاری جلد اول :كتاب الصلاة (نماز کا بیان) : حدیث:-506

كتاب الصلاة
کتاب: نماز کے احکام و مسائل
.(THE BOOK OF AS-SALAT (THE PRAYER

حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْمُنْذِرِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو ضَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ عُقْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏كَانَ إِذَا دَخَلَ الْكَعْبَةَ مَشَى قِبَلَ وَجْهِهِ حِينَ يَدْخُلُ وَجَعَلَ الْبَابَ قِبَلَ ظَهْرِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَمَشَى حَتَّى يَكُونَ بَيْنَهُ وَبَيْنَ الْجِدَارِ الَّذِي قِبَلَ وَجْهِهِ قَرِيبًا مِنْ ثَلَاثَةِ أَذْرُعٍ صَلَّى يَتَوَخَّى الْمَكَانَ الَّذِي أَخْبَرَهُ بِهِبِلَالٌ أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ صَلَّى فِيهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "وَلَيْسَ عَلَى أَحَدِنَا بَأْسٌ إِنْ صَلَّى فِي أَيِّ نَوَاحِي الْبَيْتِ شَاءَ”.

حدیث عربی بغیراعراب کے ساتھ:         

506 ـ حدثنا إبراهيم بن المنذر، قال حدثنا أبو ضمرة، قال حدثنا موسى بن عقبة، عن نافع، أن عبد الله، كان إذا دخل الكعبة مشى قبل وجهه حين يدخل، وجعل الباب قبل ظهره، فمشى حتى يكون بينه وبين الجدار الذي قبل وجهه قريبا من ثلاثة أذرع، صلى يتوخى المكان الذي أخبره به بلال أن النبي صلى الله عليه وسلم صلى فيه‏.‏ قال وليس على أحدنا بأس إن صلى في أى نواحي البيت شاء‏.‏

حدیث اردو رسم الخط میں بغیراعراب کے ساتھ:  

506 ـ حدثنا ابراہیم بن المنذر، قال حدثنا ابو ضمرۃ، قال حدثنا موسى بن عقبۃ، عن نافع، ان عبد اللہ، کان اذا دخل الکعبۃ مشى قبل وجہہ حین یدخل، وجعل الباب قبل ظہرہ، فمشى حتى یکون بینہ وبین الجدار الذی قبل وجہہ قریبا من ثلاثۃ اذرع، صلى یتوخى المکان الذی اخبرہ بہ بلال ان النبی صلى اللہ علیہ وسلم صلى فیہ‏.‏ قال ولیس على احدنا باس ان صلى فی اى نواحی البیت شاء‏.‏

‏‏اردو ترجمہ:  

ہم سے ابراہیم بن المنذر نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے ابوضمرہ انس بن عیاض نے بیان کیا، کہا ہم سے موسیٰ بن عقبہ نے بیان کیا انہوں نے نافع سے کہ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما جب کعبہ میں داخل ہوتے تو سیدھے منہ کے سامنے چلے جاتے۔ دروازہ پیٹھ کی طرف ہوتا اور آپ آگے بڑھتے جب ان کے اور سامنے کی دیوار کا فاصلہ قریب تین ہاتھ کے رہ جاتا تو نماز پڑھتے۔ اس طرح آپ اس جگہ نماز پڑھنا چاہتے تھے جس کے متعلق بلال رضی اللہ عنہ نے آپ کو بتایا تھا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے یہیں نماز پڑھی تھی۔ آپ فرماتے تھے کہ بیت اللہ میں جس کونے میں ہم چاہیں نماز پڑھ سکتے ہیں۔ اس میں کوئی قباحت نہیں ہے۔

حدیث کی اردو تشریح:   

English Translation: 

Narrated Nafi’: Whenever ‘Abdullah entered the Ka’bah, he used to go ahead leaving the door of the Ka’bah behind him. He would proceed on till the remaining distance between him and the opposite wall about three cubits. Then he would off prayer there where the Prophet (saws) had offered Salat, as Bilal informed me. Ibn ‘Umar said, "It does not matter for any of us to offer prayers at any place inside the Ka’bah.”

Related Articles

Back to top button
Close