صحیح بخاری – حدیث نمبر 85

صحیح بخاری – حدیث نمبر 85

اس شخص کے بارے میں جو ہاتھ یا سر کے اشارے سے فتویٰ کا جواب دے

حدیث نمبر: 85
حَدَّثَنَا الْمَكِّيُّ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا حَنْظَلَةُ بْنُ أَبِي سُفْيَانَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَالِمٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ يُقْبَضُ الْعِلْمُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَظْهَرُ الْجَهْلُ وَالْفِتَنُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَكْثُرُ الْهَرْجُ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَمَا الْهَرْجُ ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ هَكَذَا بِيَدِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَحَرَّفَهَا كَأَنَّه يُرِيدُ الْقَتْلَ.

حدیث کی عربی عبارت (بغیر اعراب)

حدیث نمبر: 85
حدثنا المكي بن إبراهيم ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ أخبرنا حنظلة بن أبي سفيان ، ‏‏‏‏‏‏عن سالم ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ سمعت أبا هريرة ، ‏‏‏‏‏‏عن النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ يقبض العلم، ‏‏‏‏‏‏ويظهر الجهل والفتن، ‏‏‏‏‏‏ويكثر الهرج، ‏‏‏‏‏‏قيل:‏‏‏‏ يا رسول الله، ‏‏‏‏‏‏وما الهرج ؟ فقال:‏‏‏‏ هكذا بيده، ‏‏‏‏‏‏فحرفها كأنه يريد القتل.

حدیث کی عربی عبارت (مکمل اردو حروف تہجی میں)

حدیث نمبر: 85
حدثنا المکی بن ابراہیم ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ اخبرنا حنظلۃ بن ابی سفیان ، ‏‏‏‏‏‏عن سالم ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ سمعت ابا ہریرۃ ، ‏‏‏‏‏‏عن النبی صلى اللہ علیہ وسلم، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ یقبض العلم، ‏‏‏‏‏‏ویظہر الجہل والفتن، ‏‏‏‏‏‏ویکثر الہرج، ‏‏‏‏‏‏قیل:‏‏‏‏ یا رسول اللہ، ‏‏‏‏‏‏وما الہرج ؟ فقال:‏‏‏‏ ہکذا بیدہ، ‏‏‏‏‏‏فحرفہا کانہ یرید القتل.

حدیث کا اردو ترجمہ

ہم سے مکی ابن ابراہیم نے بیان کیا، انہیں حنظلہ نے سالم سے خبر دی، انہوں نے ابوہریرہ (رض) سے سنا، وہ رسول اللہ ﷺ سے روایت کرتے ہیں آپ نے فرمایا کہ (ایک وقت ایسا آئے گا کہ جب) علم اٹھا لیا جائے گا۔ جہالت اور فتنے پھیل جائیں گے اور ہرج بڑھ جائے گا۔ آپ سے پوچھا گیا کہ یا رسول اللہ ! ہرج سے کیا مراد ہے ؟ آپ نے اپنے ہاتھ کو حرکت دے کر فرمایا اس طرح، گویا آپ نے اس سے قتل مراد لیا۔

حدیث کا انگریزی ترجمہ (English Translation)

Narrated Abu Hurairah (RA): The Prophet ﷺ said, "(Religious) knowledge will be taken away (by the death of religious scholars) ignorance (in religion) and afflictions will appear; and Harj will increase.” It was asked, "What is Harj, O Allahs Apostle?” He replied by beckoning with his hand indicating "killing.” (Fateh-al-Bari Page 192, Vol. 1)

اس پوسٹ کو آگے نشر کریں